دنیا کی وہ لڑکی جس کے لیے پانی زہر اور تیزاب کی حثیت رکھتا ہے

ایریزونا کی 15سالہ ایبی گیل نے 1سال سے زیادہ عرصے سے پانی نہیں پیا ہے اور وہ پانی کی کمی کو پورا کرنے کے لیے ہائیڈریشن گولیاں استعمال کرتی ہے۔

ایبی گیل پانی کی الرجی میں مبتلا دنیا کے 100 مریضوں میں سے ایک ہے۔ وہ نہانے سے قاصر ہیں اور اس کے اپنے آنسو اس کے لیے تیزاب کی حثیت رکھتے ہیں ۔

ایبی گیل آبی الرجی کی ایک نایاب قسم کی بیماری کا شکار ہیں ۔ ان کے جسم پر پانی کی بوندیں ٹپکتے ہی سوزش اور جلن شروع ہو جاتی ہے کیونکہ پانی ان کے لیے تیزا ب جیسا ہے۔ جب بھی وہ پانی پیتی ہے تو انہیں بہت زیادہ قے آتی ہے۔

یہاں تک کہ آنسو بھی ان کے لیے بہت تکلیف دہ ہوتے ہیں کیونکہ نمکین مائع انھیں بہت تکلیف دیتے ہیں۔ ایبی کیبل کا کہنا ہے کہ میری زندگی برباد ہو گئی ہے۔ جب بھی میں پانی پیتی ہوں، میرا دل جلتا ہے اور میرا دل تیزی سے دھڑکنے لگتا ہے،ایبی گیل نے کہا کہ ایک سال سے پانی کا ایک گلاس نہیں پیا، پانی کی کمی کو پورا کرنے کے لیے ہائیڈریشن کی گولیاں کھائیں۔ بعض اوقات وہ انار کا جوس اور انرجی ڈرنکس بھی پیتی ہیں۔

ایبی گیل بالکل ایسی کوئی ایکٹیوٹی نہیں کرتی جس سے انہیں پسینہ آئے اور وہ برسوں سے بارش میں باہر نہیں گئی ہیں کیونکہ اس کے علاقے میں معمول سے زیادہ بارش ہو رہی ہے۔ انہیں پیاس نہیں لگتی اور پانی کا ذائقہ خراب محسوس ہوتا ہے۔

چند روز قبل انہوں نے سپورٹس ڈرنک پیا جس میں پانی کی مقدار زیادہ تھی۔ جس کے بعد وہ کچھ عرصے سے درد میں مبتلا رہیں ۔ ان کی بیماری کا سب سے خطرناک پہلو یہ ہے کہ دنیا کے ماہر ترین ڈاکٹروں کو بھی اس کیفیت کا علم نہیں کیونکہ اب تک صرف چند درجن مریض پانی کی اس شدید الرجی میں مبتلا پائے گئے ہیں۔

ایبی گیل کا کہنا ہے کہ عمر بڑھنے کے ساتھ ساتھ ان کی الرجی بدتر ہوتی جارہی ہے۔

جواب دیں

Please enter your comment!
Please enter your name here

2 + = 10