رینجرآفیسر ٹھاکر سوشل میڈیا کی فیورٹ پرسنیلٹی بن گیا، مونچھوں پر شاعری ہونے لگی

اسلام آباد(سوشل میڈیا ڈیسک) ایم کیو ایم کے رہنما ڈاکٹر فاروق ستار کو گرفتار کرنے والے رینجر آفیسر ٹھاکر ان دنوں پاکستانیوں کی محبوب شخصیت کا روپ دھار چکے ہیں۔بہت سے لوگوں نے اپنی ڈی پی میں ٹھاکر کی تصویر لگا رکھی ہے۔ راتوں رات شہرت کی بلندیوں پر پہنچنے والے ٹھاکر کا پورا نام رانا ٹھاکر ہے ۔اور وہ پنجاب رینجرز میں بھرتی ہوئے تھے جس کے بعد سندھ رینجرز میں چلے گئے۔ رانا ٹھاکر کا تعلق رینجرز کے 61 ونگ سے ہے جبکہ وہ سندھ رینجرز میں ڈی ایس آر کے عہدے پر تعینات ہیں۔سندھ رینجرزمیں رانا ٹھاکر کو خاص مقام حاصل ہے اور انہیں مشکل مشن پر بھیجا جاتا ہے۔ ٹھاکر کی پہچان ان کی بڑی بڑی مونچھیں ہیں۔ جن کا وہ بے حد خیال رکھتے ہیں۔ سوشل میڈیا پر ان کی مونچھوں کی مدح سرائی جوش و خروش سے ہو رہی ہے۔ اور تو اور ان کی مونچھوں پر شاعری بھی ہونے لگی ہے۔ جس میں سے نصرت فتح علی خاں کی آواز میں گائے گئے مشہور کلام آفریں آفریں میں تبدیلی کر کے پیش کیا جانے والا کلام سرفہرست ہے۔ اس کے علاوہ بھی ان کی مونچھوں کی شان میں بہت سارے نوجوان مدح سرائی میں مصروف نظر آتے ہیں۔ شاعری کے نمونے ملاحظہ فرمائیے۔
Thakur
ایسا دیکھا نہیں خوبصورت کوئی
جسم جیسے اجنتا کی مُورت کوئی
مونچھ ایسے کہ کالی دھنک ہو کوئی
مونچھ نغمہ کوئی، مونچھ خوشبو کوئی
مونچھ ایسے کہ جیسے ہو کالی گھٹا
مو نچھ کے سائے میں دیکھ ٹھاکر چھُپا
مُونچھ کے نام ہے آج سارا سُخن
دیکھ رینجر کی وردی میں کیسا بدن
صندلیں صندلیں مر مریں، مر مریں
اپنے ٹھاکر کی تعریف ممکن نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مونچھیں جھک کر اٹھیں تو ادا بن گئیں
مونچھں اُٹھ کر جھکی تو وفا بن گئیں
مونچھ بھائی کے بندوں پہ ہے اک قہر
آگ جس نے لگائی ہے شام و سحر
مونچھ میں ہے چُھپا ایک تاثر عجب
مونچھ ہے کوئی گویا کہ ضربِ عضب
مونچھ ایسے کہ بالوں کی ہو کہکشاں
مونچھ جیسے الف لیلوی داستاں
مونچھ ایسی جہاں میں کوئی بھی نہیں
اپنے ٹھاکر کی تعریف ممکن نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مونچھ دلکش حسیں، مونچھ سا کوئی نہیں
مونچھ سے ہے چمکتی وہ روشن جبیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مونچھ کلچر، ثقافت، دہشت بھی ہے
مونچھ عزت، دولت، طاقت بھی ہے
مونچھ خالی نہیں مثلِ تلوار ہے
مونچھ کی زد میں اظہار، ستار ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مونچھیں جھک کر اٹھیں تو ادا بن گئیں
مونچھں اُٹھ کر جھکی تو وفا بن گئیں
مونچھ بھائی کے بندوں پہ ہے اک قہر
آگ جس نے لگائی ہے شام و سحر
مونچھ میں ہے چُھپا ایک تاثر عجب
مونچھ ہے کوئی گویا کہ ضرب۔ عضب
مونچھ ایسے کہ بالوں کی ہو کہکشاں
مونچھ جیسے الف لیلوی داستاں
مونچھ ایسی جہاں میں کوئی بھی نہیں
اپنے ٹھاکر کی تعریف ممکن نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مونچھیں روشن، چمکدار،مہتاب ہیں
مونچھیں صفحہ نہیں، مونچھیں نصاب ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مونچھیں انکی اٹھی تو اٹھی رہ گئی
زمیں جانے کیسے یہ زلزلہ سہہ گئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مونچھ ہی مونچھ کا ہے اب تذکرہ
مونچھ ہی مونچھ ہے اب ہر جگہ
مونچھ ہےروشنی، مونچھ پہچان ہے
امن اور محبت ہے ایمان ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مونچھیں بارڈر پہ کانٹوں کی اک باڑ ہیں
اور لیاقت کو، واسع کو یہ تاڑ ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مونچھیں افسانہ ہیں، مونچھیں اشعار بھی
مونچھیں چہرے پہ ہیں، مونچھیں دستار بھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مونچھوں پہ یہ چہرہ جو آباد ہے
دیکھو کیسا کھلا کھلا شاداب ہے.
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مونچھیں چھوٹی ہوئیں تو ادا ہو گئیں
مونچھیں لمبی ہوئیں تو سوا ہو گئیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مونچھ ہوئی کہ یہ فسانہ ہوا
دیکھو شہرت کا اک بہانہ ہوا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مونچھوں کی نازکی مونچھوں کی نغمگی
ریشمی ریشمی ریشمی ریشمی!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مونچھوں کی تعریف اب ممکن نہیں
شعر، غزل، افسانہ کچھ بھی نہیں
مونچھیں اب ہیں الف لیلوی داستاں
گونجتی رہے گی صدیوں ان کی صدا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Farooq-Sattar-arrested-696x418media
rana thakurThakur1thakur2

جواب دیں

Please enter your comment!
Please enter your name here

72 − = 70