پاناما لیکس وزیراعظم نواز شریف کی سیاست کی تباہی کا آغاز ہے: عمران خان

Panama Lex

اسلام آباد/لندن(مانیٹرنگ ڈیسک)تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ پاناما لیکس وزیراعظم نواز شریف کی سیاست کی تباہی کا آغاز ہے ، انجام بھیانک ہو گا،آف شور کمپنیاں بنانے کا مقصد چوروں کو تحفظ دینا ہے ،ترقی پذیر ممالک کے حکمرانوں کی جانب سے عوام کا پیسہ بیرون ملک جمع کرنا شرمناک ہے جبکہ وہاں کی عوام کو بنیادی سہولیات بھی میسر نہیں ہیں، پاکستانی کرپٹ حکمرانوں کا اتحاد ایک دوسرے کو بچانے کے لئے ہے ۔برطانوی جریدے کو انٹرویو میں عمران خان نے کہا کہ پاناما لیکس سے حیران نہیں بلکہ خوش ہوا ہوں، کتنے شرم کی بات ہے کہ ترقی پریز ممالک کے حکمران عوام کا پیسہ بیرون ملک جمع کرتے ہیں وزیراعظم اب مصیبت میں ہیں اور میرے خیال میں ان سے اب پاکستان چلانا ممکن نہیں رہا۔انہوں نے کہا کہ پاکستان میں ٹیکس چوری نہیں بلکہ حکمران طبقہ عوام کی جیبوں پر ڈاکہ ڈالتا ہے ، اگر ہمارے حالات کے تناظر میں اس مسئلے پر نظر ڈالیں تو ہم ڈوب رہے ہیں، ہماری 50 فیصد آبادی کے پاس کھانے کو خوراک نہیں ہے اور حکمران طبقہ نہ صرف پیسہ چوری کر کے بیرون ملک اکاؤٹس میں جمع کرا رہا ہے بلکہ ٹیکس چوری بھی کر رہا ہے تو ایسے میں ان لوگوں کے پاس حکومت کرنے کا کوئی اختیار نہیں۔برطانیہ میں میئر کے انتخاب کی دوڑ میں شامل اپنے سابق برادر نسبتی زیک گولڈ اسمتھ کی الیکشن مہم کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ میں لندن کی سیاست اور میئر شپ کے انتخابات سے مکمل طور پر دور ہوں۔اسلام آباد میں پاک چائنا سنٹر میں مقامی سکول کی تقریب سے خطاب اور بعدازاں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے عمران خان نے کہا ہے کہ سپریم کورٹ کے جسٹس کی سربراہی میں کمیٹی بنی تو منظور ہوگی ورنہ نہیں ہوگی ملک میں سب کا احتساب ہونا ضروری ہے ، پارلیمانی کمیٹی نے پہلے کبھی کچھ کیا نہ اب کچھ کرے گی ،نیشنل ایکشن پلان پر پوری طرح عملدرآمد کرکے ملک میں تمام عسکری گروہوں کے خلاف بھر کارروائی عمل میں لائی جائے راجن پور میں آپریشن سے پنجاب پولیس کی کارکردگی سامنے آگئی ہے ۔ایک سوال کے جواب میں انھوں نے کہا کہ دہشت گردی کے خلاف پوری قوم کو باہم متحدہونا ہوگا ۔انھوں نے کہا کہ خیبر پختونخوا کے تین طرف قبائلی علاقے ہیں آپریشن کے باعث جوعسکریت پسند افغانستان چلے گئے تھے وہ واپس آسکتے ہیں اسی طرح قبائلی عوام جب اپنے گھروں کو واپس آئیں گے تو عسکریت پسند بھی آسکتے ہیں ا س معاملہ کو سنجیدہ لیا جاناچاہیے ۔کراچی میں پولیس اہلکاروں پر دہشتگردوں کے حملے کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ پولیس اہلکاروں پر حملے میں ملوث دہشتگردوں کو فوری گرفتار کرکے کڑی سزا دی جائے اور واقعے کی فوری اور جامع تحقیقات کی جائیں۔ انہوں نے کہا کہ پنجاب اور سندھ پولیس کا یہ حال ہے وہ حفاظت نہیں کر سکتی فوج کو بلانا پڑتا ہے ۔

جواب دیں

Please enter your comment!
Please enter your name here

5 + 4 =