کرنسی کنورٹر

اوپن مارکیٹ ریٹس

ہمیں فالو کریں

759,401FansLike
9,842FollowersFollow
534,000FollowersFollow
146,564SubscribersSubscribe

عام انتخابات میں غیر معمولی خاموشی

قادر خان یوسف زئی

جیسے جیسے پاکستان کے عام انتخابات کی الٹی گنتی تیزی سے الیکشن کے قریب پہنچ رہی ہے، ایسا لگتا ہے کہ قوم پر ایک غیر معمولی بے سکونی چھائی ہوئی ہے، اسے بے یقینی کی بد ترین صورت حال بھی کہا جاسکتا ہے کیونکہ قیاس آرائیوں کا زور اور الیکٹ ایبلز کی سیاست نے سیاسی ماحول پر جمود طاری کردیا ہے۔

2024 کے مقابلے میں پچھلے انتخابی موسموں کے برعکس، سیاسی اشتہارات، متحرک پوسٹرز، اور پرجوش انتخابی ریلیاں خاص طور پر منظر نامے سے غائب ہیں۔ سڑکیں، چوراہوں اور میڈیا آؤٹ لیٹس جو کبھی مختلف سیاسی جماعتوں کے نشانات اور نعروں سے گونجتے تھے، اب خاموشی کا مظاہرہ کرتے دکھائی دیتے ہیں۔ ہر ایک کے ذہن میں یہ سوال ہے: کیوں؟۔

latest urdu news

ماضی کی جاندار اور پُرجوش مہمات کے برعکس پاکستان میں موجودہ انتخابی سیزن ایک دبنگ ماحول سے محروم نظر آرہا ہے، اب اسے یہ تو نہیں کہا جاسکتا کہ الیکشن کمیشن کی جانب سے کسی ضابطہ اخلاق کی پابندی ہو رہی ہو، بلکہ بینرز اور پوسٹرز، جو کبھی سڑکوں اور چوراہوں پر ہر جگہ نظر آتے تھے، ان کی تعداد واضح طور پر کم ہے۔ الیکٹرانک اور پرنٹ میڈیا، جو کسی زمانے میں چمگادڑوں کی آوازوں، شیروں کی دھاڑ اور تیروں کے نشانے والے سیاسی اشتہارات سے بھرا ہوا تھا، خاص طور پر خاموش ہیں۔

انتخابی ماحول کی سب سے بڑی سرگرمی میں سب سے نمایاں فرق روایتی سیاسی جلسوں کی غیر موجودگی ہے جسے ’’ جلسوں‘‘ اور عظیم الشان جلوسوں کے نام سے جانا جاتا ہے جو عوام کی توجہ اپنی طرف کھینچ لیتے تھے۔

ماضی میں، انتخابات کی دوڑ میں پرجوش اجتماعات، پرجوش حامیوں، اور پارٹی کے رنگوں کا ایک متحرک مظاہرہ دیکھا گیا۔ تاہم، اس بار، بڑے پیمانے پر واقعات کی عدم موجودگی نے پاکستانی انتخابات سے وابستہ معمول کے جوش و خروش میں ایک خلا چھوڑ دیا ہے۔ سرد موسم میں ووٹروں اور سیاسی جماعتوں کی سرگرمیوں کا سرد ہونے کا براہ راست واسطہ ایسے معروف سیاست دان بھی ہیں جنہوں نے اپنے بیانات میں الیکشن کی تاریخ آگے بڑھانے اور بالخصوص سینیٹ میں انتخابات کی تاخیر کے حوالے سے قرارداد کی منظوری نے سیاسی ماحول کو شدید متاثر کیا۔

latest urdu news

عام انتخابات میں دو ہفتے سے بھی کم وقت باقی ہے، سیاسی کارکنوں اور عام عوام دونوں میں کم جوش کا احساس چھایا ہوا ہے۔ انتخابی مہم کی سرگرمیاں نظر نہ آنے سے سیاسی جماعتوں کی حکمت عملیوں اور ترجیحات پر سوالات اٹھتے ہیں۔ سرگرمیوں سے بھرے انتخابی دفاتر کی کمی اور سڑکوں پر سیاسی گفتگو میں مصروف لوگوں کی دبنگ موجودگی ماضی کے انتخابی چکروں میں دیکھنے والی پرجوش مصروفیت سے الگ ہونے کا اشارہ دیتی ہے۔ اس انتخابی سیزن کی غیر معمولی خاموشی میں کئی عوامل اہم کردار ادا کر رہے ہیں۔

ایک قابل فہم وضاحت ڈیجیٹل مہم کا ابھرتا ہوا منظر نامہ ہے۔ سوشل میڈیا کے زیر تسلط دور میں، سیاسی جماعتیں اپنی توجہ اور وسائل کو آن لائن پلیٹ فارمز کی طرف موڑ رہی ہیں، ہدفی پیغامات کے ساتھ وسیع تر سامعین تک پہنچ رہی ہیں۔ مزید برآں، موجودہ سماجی و سیاسی آب و ہوا، معاشی چیلنجز، جیسے بیرونی عوامل موجودہ انتخابی دور کی دبی ہوئی نوعیت کو متاثر کر رہے ہیں۔ اہم مسائل پر قوم کی اجتماعی توجہ سیاسی مہمات سے وابستہ روایتی شان و شوکت سے توجہ ہٹا رہی ہے۔

جیسے جیسے سیاسی منظر نامے عام انتخابات کے ایک اور دور کے لیے تیار ہو رہے ہیں، ایک لطیف لیکن اہم تبدیلی بھی جاری ہے۔ تجربہ کار سیاست دانوں کا روایتی گڑھ، جنہیں اکثر ’ الیکٹ ایبلز‘ کہا جاتا ہے، کو نوجوان ووٹروں کی متحرک قوت کی جانب سے بے مثال چیلنج کا سامنا ہے۔ اگرچہ ان تجربہ کار امیدواروں کی انتخابی صلاحیت کئی دہائیوں سے ناقابل تسخیر ہے، تبدیلی کی ہوائوں کی فضا سست ہے تاہم، سیاسی بیانیہ کی تشکیل میں نوجوانوں کا کردار تیزی سے واضح ہوتا جا رہا ہے۔ سیاسی سرگرمیوں میں کمی کی ایک وجہ یہ بھی قرار دی جارہی ہے۔

latest urdu news

برسوں سے، سیاسی جماعتوں نے ثابت شدہ ٹریک ریکارڈ کے حامل امیدواروں پر انحصار کیا ہے، جو اکثر دہائیوں پر محیط انتخابی فتوحات کا مترادف ہے۔ ان ’ الیکٹ ایبلز‘ کو ایک محفوظ شرط کے طور پر دیکھا جاتا ہے، جو پارٹی کے لیے کامیابی کی ضمانت ہے۔ کمیونٹیز کے اندر ان کے گہرے روابط اور مقامی سیاست کے پیچیدہ جال کے بارے میں ان کی سمجھ نے انہیں مضبوط دعویدار بنا دیا ہے۔ سیاسی ماحول میں عام ووٹرز پر تکیہ کرنے کا عمل عام و روایتی سیاست کو متاثر کر رہا ہے۔

حالیہ دنوں میں سیاسی پلے بک میں ایک نیا باب بھی لکھا جا رہا ہے اور نوجوان ووٹر مرکزی کردار کے طور پر ابھر رہے ہیں۔ ہماری قوم کے متنوع تانے بانے میں پھیلے ہوئے یہ نوجوان مختلف پس منظر، شہری اور دیہی، تعلیم یافتہ اور کم تعلیم یافتہ ہیں۔ اگرچہ یہ سچ ہے کہ وہ یکساں سیاسی جھکاؤ رکھنے والا یک سنگی گروہ نہیں ہیں، لیکن ان کے اجتماعی اثرات کو نظر انداز نہیں کیا جا سکتا۔

تقریباً 30% نوجوان ووٹرز ایسے انتخاب کر رہے ہیں جو اپنے والدین اور بزرگوں کی سیاسی وابستگیوں سے ہٹ کر ہوتے ہیں۔ یہ تبدیلی، اگرچہ عالمگیر نہیں، لیکن نوجوانوں میں بدلتے ہوئے سیاسی شعور کی نشاندہی کرتی ہے۔ سیاسی ماحول میں نوجوانوں کا بدلتا رجحان روایتی سیاست دانوں سے عدم دلچسپی کا شکار ہے اور یہ بھی ایک اہم وجہ ہے کہ نوجوان اپنی صفوں میں نوجوانوں کو ہی دیکھنا چاہتا ہے۔

latest urdu news

سیاسی منظر نامہ ایک جہتی نہیں ہے، اور نوجوان ووٹروں میں تنوع انتخابی سیاست پر ان کے ردعمل سے ظاہر ہوتا ہے۔ شہری نوجوان، جو اکثر نظریات اور عالمی تناظر کی وسیع رینج کے سامنے آتے ہیں، ترقی پسند نظریات کی طرف جھکے ہوئے ہیں۔ دوسری طرف، دیہی نوجوان، جو کہ مقامی روایات میں گہرائی سے جڑے ہوئے ہیں، ان امیدواروں کے ساتھ گونج پا سکتے ہیں جن کی نچلی سطح پر موجودگی مضبوط ہے تعلیمی سپیکٹرم مساوات میں مزید پیچیدگی کا اضافہ کرتا ہے۔ تعلیم یافتہ نوجوان، معلومات تک رسائی اور متنوع نقطہ نظر کے ساتھ، پالیسی پوزیشن اور وعن کی بنیاد پر امیدواروں کی جانچ پڑتال کر رہے ہیں۔

دوسری طرف، کم تعلیم یافتہ نوجوان اپنے انتخابی انتخاب میں واقفیت اور مقامی رابطوں کو ترجیح دے سکتے ہیں۔ نوجوان ووٹروں کے رویے کی پیش گوئی کرنا ایک زبردست چیلنج ہے۔ ان الیکٹیبلز کے برعکس جن کے پاس ووٹر کی اچھی بنیاد ہے، نوجوانوں کا ووٹ سیال اور غیر متوقع ہے۔ یہ انتہائی غیر متوقع ہے جو مستقبل کے انتخابات میں گیم چینجر ثابت ہو سکتی ہے۔ جیسے جیسے سیاسی جماعتیں آئندہ انتخابات کے لیے حکمت عملی بنا رہی ہیں، یہ احساس تیزی سے واضح ہوتا جا رہا ہے کہ نوجوانوں کا ووٹ ایک ایسی قوت ہے جو سیاسی ماحول کی سرگرمیوں کا ماحول دلچسپ بنا سکتا ہے۔

latest urdu news