اوپن مارکیٹ ریٹس

ہمیں فالو کریں

888,179FansLike
10,001FollowersFollow
569,100FollowersFollow
191,068SubscribersSubscribe

عدالت کا چائلڈ میرج ایکٹ 1929 کے 95 برس پرانے قانون میں ترمیم کا حکم

لاہور ہائیکورٹ نے چائلڈ میرج ایکٹ 1929 کے 95 برس پرانے قانون میں ترمیم کا حکم دیدیا۔

چائلڈ میرج ایکٹ 1929 کے تحت لڑکے کی شادی کی عمر 18 اور لڑکی کی 16 سال ہے جس میں عدالت نے لڑکی اور لڑکے کی عمر میں فرق کی شق کو کالعدم قرار دیدیا۔

لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس شاہد کریم نے 5 صفحات کا تحریری فیصلہ جاری کیا جس میں کہا گیا ہے کہ چائلڈ میرج کیخلاف مؤثر اقدامات اٹھانے کی ضرورت ہے، شادی کے قانون کا مقصد سماجی اقتصادی اور تعلیمی عوامل کیساتھ جڑنا ہے۔

urdu news today

عدالتی فیصلے میں کہا گیا ہے کہ آئین کے تحت تمام شہری قانون کی نظر میں برابر ہیں، کسی بھی شہری کیساتھ امتیازی سلوک نہیں کیا جاسکتا، عمر کے فرق کو غیر آئینی اور کالعدم قرار دیا جاتا ہے، حکومتی عدالتی فیصلے کی روشنی میں چائلڈ میرج ایکٹ میں 15 روز میں ترمیم کرے۔