اوپن مارکیٹ ریٹس

ہمیں فالو کریں

957,235FansLike
10,005FollowersFollow
575,400FollowersFollow
200,591SubscribersSubscribe

ہتک عزت قانون کو منظور کروانے میں پیپلزپارٹی کا کوئی کردار نہیں، گورنر پنجاب

گورنر پنجاب سلیم حیدر نے کہا کہ پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) ہتک عزت کا قانون منظور کرانے میں ملوث نہیں، ہتک عزت کا قانون آئین میں 18 ویں ترمیم کی بنیاد پر منظور کیا گیا ہے۔

دبئی میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے گورنر پنجاب سلیم حیدر نے کہا کہ پیپلزپارٹی کے اراکین اسمبلی نے ہتک عزت کے قانون کی موقع پر کارروائی کا بائیکاٹ کیا تھا اور میں نے بطور گورنر بھی اس قانون کو روکنے کی کوششیں کی تھیں۔

گورنر پنجاب سلیم حیدر نے کہا کہ میں نے بل پر دستخط نہیں کیے تھے اور 15 دن میں ہتک عزت کا بل ازخود پاس ہو جانا تھا۔

گورنر پنجاب نے کہا کہ پیپلز پارٹی پنجاب ہتک عزت کے قانون میں شامل نہیں لیکن ہتک عزت کا قانون 15 دن کے بعد ویسے ہی پاس ہوجا نا تھا، ہتک عزت کا قانون 18 ویں ترمیم کے تحت پاس کیا گیا ہے۔

سلیم حیدر نے کہا کہ قانون میں تبدیلی کی گنجائش موجود ہے، جب میں گھر واپس آؤں گا تو میں دوبارہ قانون کو سمجھنے کی کوشش کروں گا۔

اس سے قبل 23 مئی کو گورنر پنجاب سلیم حیدر نے نجی ٹی وی چینل کو کہا تھا کہ حکومت کو ہتک عزت کے قانون میں جلد بازی نہیں کرنی چاہیے بلکہ اس پر نظرثانی کرنی چاہیے۔

واضح رہے کہ پنجاب اسمبلی سے 2 روز قبل منظور کیا گیا ہتک عزت کا قانون نافذ العمل ہو چکا ہے اور موجودہ گورنر ملک محمد احمد خان نے اس پر دستخط کر دیے تھے۔

صحافتی تنظیموں کے اعتراضات اور اپوزیشن کے احتجاج کے باوجود پنجاب اسمبلی سے ہتک عزت بل 2024 منظور کر لیا گیا ہے۔

latest urdu news