اوپن مارکیٹ ریٹس

ہمیں فالو کریں

957,235FansLike
10,005FollowersFollow
575,400FollowersFollow
200,591SubscribersSubscribe

اگر پارٹی میں مائنس ون ہوا تو پارٹی ہی نہیں رہے گی،اسد عمر

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے رہنما اسد عمر نے کہا ہے کہ اسمبلیوں کی تحلیل جولائی میں ہوجاتی، ہمیں یہ قبول کرنا چاہیے تھا، اگر پارٹی میں مائنس ون ہوتا ہے تو پارٹی ہی نہیں رہے گی، پی ٹی آئی کے علاوہ میری کوئی سیاست نہیں۔

اسد عمرنے کہا کہ 9 مئی کو جو خطرات نظر آئے، وہ الارمنگ تھے۔ پاکستان پر اس وقت جو خطرناک وقت آیا ہے، اس سے پہلے کبھی نہیں دیکھا۔ اس وقت ملک جس نہج پر پہنچ چکا ہے سب کو دو قدم پیچھے ہٹنا پڑے گا۔

اسد عمر کا کہنا تھا کہ بات ہی نہیں کریں گے والی بات غلط ہے، کئی بار کہہ چکا ہوں پی ٹی آئی کی ٹکراؤ والی اسٹریٹیجی سے اتفاق نہیں کرتا۔ این آر او نہیں دینا چاہتے بالکل نہ دیں لیکن سیاسی لوگوں کے ساتھ بیٹھنا چاہیے۔ جرم کیے ہیں تو اپنا نظام بہتر کریں مگر سیاسی ڈائیلاگ سے منع نہیں کر سکتے۔

نامعلوم افراد کی کار پر فائرنگ کمسن بچی سمیت 3 افراد جاں بحق

سابق وفاقی وزیر نے کہا کہ 2018 کے الیکشن میں پی ٹی آئی نے 1 کروڑ 68 لاکھ ووٹ لیے جبکہ پی ڈی ایم نے مجموعی طور پر سوا دو کروڑ ووٹ لیے۔ اس لیے سیاسی طور پر یہ نہیں کہہ سکتے کہ جنہیں سوا دو کروڑ لوگوں نے ووٹ ڈالا ان سے سیاسی مسائل حل کرنے کیلئے بات نہیں کروں گا۔

انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ نے ہمیں پلیٹ فارم دیا تھا، اس وقت ڈیل کو فائنل کرلینا چاہیے تھا۔ چیف جسٹس عمر عطا بندیال کے اس پلیٹ فارم سے ہمیں استفادہ کرنا چاہیے تھا، اگر پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) معاہدے کی خلاف ورزی بھی کرتی تو کم از کم بے نقاب ہوجاتی۔

سیاسی مستقبل کے حوالے سے پی ٹی آئی رہنما نے کہا کہ پی ٹی آئی کے علاوہ میری کوئی سیاست نہیں۔ پارٹی کسی اور راستے پر نکل پڑتی ہے تو سیاست ہی چھوڑ دوں گا۔ 2021 میں فیصلہ کرچکا تھا کہ 2023 کا الیکشن نہیں کروں گا لیکن اب ایسی صورت حال ہوگئی ہے کہ ہوسکتا ہے الیکشن لڑ لوں۔

صحافی کی جانب سے سوال کیا گیا جو لوگ پی ٹی آئی چھوڑ کر استحکام پاکستانی پارٹی میں گئے انکا مستقبل کیا ہے؟ جواب میں اسد عمر نے کہا کہ سیاست دان کا فیصلہ عوام کرتی ہے۔ استحکام پارٹی بننے کے بعد پی ٹی آئی چھوڑنے والوں سے کوئی بات نہیں ہوئی۔

نامعلوم افراد کی کار پر فائرنگ کمسن بچی سمیت 3 افراد جاں بحق

پی ٹی آئی کے سابق رہنما پرویز خٹک کی جانب سے نئی پارٹی بنانے کی خبروں سے متعلق انہوں نے کہا کہ ان سے عنقریب ملاقات ہوگی، پارٹی چھوڑنے سے متعلق پوچھوں گا۔ آخری ملاقات میں پرویز خٹک نے کہا تھا کہ نوشہرہ کی سیٹ بلے کے بغیر جیتنا مشکل ہے۔

اسد عمر نے مزید کہا کہ گزشتہ سال اکتوبر میں قمر جاوید باجوہ کے ساتھ ہماری میٹنگ ہوئی، اس میں بھی کہا تھا کہ یہاں جتنے بھی لوگ بیٹھے ہیں ملک کے لیے ہیں۔ جب تاریخ لکھی جائے گی تو ہمیں لکھا جائے گا کہ ہم مسئلہ حل کرنے میں ناکام رہے۔